11

جوش بڑھانے والی دوا دے کر بیٹیوں کے ساتھ ایسا گھنونا کام کرتی تھی سوتیلی ماں ، جان کر اڑ جائیں گے ہوش

درج کیس کے مطابق ملزمہ سوتیلی ماں کنبہ کے ساتھی لوگوں کو رات کے کھانے کے بعد یہ کہہ کر گولیاں کھلانی شروع کردیں کہ یہ صحت کیلئے مفید ہے ۔ اس گولی کو کھا کر والد ، دادا اور دادی گہری نیند میں سوجاتے تھے جبکہ انہیں اور ان کی بہنوں کا گولیاں کھانے کے بعد جنسی جوش بڑھ جاتا تھا ۔

اترپردیش کے علی گڑھ میں حیران کردینے والا ایک معاملہ سامنے آیا ہے ۔ یہاں ساسنی گیٹ تھانہ حلقہ کی رہنے والی 19 سالہ بی ایس سی طالبہ نے اپنی سوتیلی ماں کے خلاف چھیڑ چھاڑ کو لے کر مقدمہ درج کرایا ہے ۔ جانچ کے بعد پولیس نے خاتون کو گرفتار کرکے جیل بھیج دیا ۔ بتایا جارہا ہے کہ ملزمہ خاتون کی یہ چوتھی شادی ہے ۔ خاتون سے پوچھ گچھ میں جانکاری ملی ہے کہ اس کی پہلی شادی دہلی کے رہنے والے ایک شخص کے ساتھ ہوئی تھی ۔

دراصل پہلی بیوی کی موت کے بعد 46 سالہ شخص کی معاشقہ کی شادی پورے کنبہ کو بھاری پڑگئی ۔ یہ معاشقہ فیس بک کے ذریعہ پروان چڑھا تھا ۔ دوسری بیوی ہم جنس پرست نکلی ۔ وہ پہلی بیوی سے ہوئی تین بیٹیوں ( ایک بالغ ، دو نابالغ ) کو جوش بڑھانے والی دوائیں کھلا کر ان سے جسمانی تعلقات بنانے لگی تھی ۔ بالغ بیٹی کی شکایت پر ایک ہفتہ پہلے خاتون تھانہ میں ملزمہ سوتیلی ماں کے خلاف مقدمہ درج کیا گیا ۔ جانچ کے بعد خاتون کو گرفتار کرکے جیل بھیج دیا گیا ۔

متاثرہ طالبہ کے ذریعہ درج کرائے گئے کیس کے مطابق ان کی دو نابالغ بہنیں ہیں اور ایک بھائی ہے ۔ ان کے والد ایک پرائیویٹ کمپنی میں نوکری کرتے ہیں ۔ 13 فروری 2019 کو ماں کی موت کے بعد فیس بک پر والد کی ایک 45 سالہ خاتون سے دوستی ہوئی ۔ دوستی پیار میں بدلی تو کنبہ خاتون سے شادی کیلئے رضامند ہوگیا ۔ 14 فروری 2020 کو ویلنٹائن ڈے کے دن دونوں کی مندر میں شادی کرادی گئی ۔ وہ خاتون خود کو نرس بتاتی ہے ۔

درج کیس کے مطابق ملزمہ سوتیلی ماں کنبہ کے ساتھی لوگوں کو رات کے کھانے کے بعد یہ کہہ کر گولیاں کھلانی شروع کردیں کہ یہ صحت کیلئے مفید ہے ۔ اس گولی کو کھا کر والد ، دادا اور دادی گہری نیند میں سوجاتے تھے جبکہ انہیں اور ان کی بہنوں کا گولیاں کھانے کے بعد جنسی جوش بڑھ جاتا تھا ۔ اس کے بعد وہ خاتون تینوں کے ساتھ فحش حرکتیں کرکے جسمانی تعلقات بنانے کی کوشش کرنے لگی ۔ وہ فحش فلمیں اور تصاویر دکھاتی تھی ۔

بتایا جارہا ہے کہ ملزمہ خاتون کی یہ چوتھی شادی ہے ۔ خاتون سے پوچھ گچھ میں جانکاری ملی ہے کہ اس کی پہلی شادی دہلی کے رہنے والے ایک شخص کے ساتھ ہوئی تھی ۔ سال 2005 میں اس شخص کی موت ہوگئی تھی ۔ اس معاملہ میں دفعہ 302 کا مقدمہ بھی درج ہوا ۔ قتل کے الزام میں اس خاتون سمیت دو دیگر لوگ نامزد ہوئے اور یہ خاتون جیل بھی گئی تھی ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں